Media Update: United Nations Pakistan, 16 December 2020

This Media Update includes: 

  • ILO - PRESS RELEASE81 million jobs lost as COVID-19 creates turmoil in Asia-Pacific labour markets
  • MoNHS,R&C and UNICEF - PRESS RELEASE : Strict Adherence to SoPs Imperative for Countering Second Wave of COVID-19
  • UNODC - PRESS RELEASEFourth steering committee meeting convened to advance Rule of Law roadmap in Balochistan

ILO

PRESS RELEASE

81 million jobs lost as COVID-19 creates turmoil in Asia-Pacific labour markets

Pandemic leads to huge reduction in working hours, reverses job growth and pushes millions into working poverty.

BANGKOK (ILO News) – Massive drops in working hours due to the COVID-19 crisis  have had a devastating effect on jobs and incomes in Asia and the Pacific according to a new report by the International Labour Organization (ILO). According to Asia–Pacific Employment and Social Outlook 2020: Navigating the crisis towards a human-centred future of work  estimates, the economic backlash of the COVID-19 pandemic wiped out some 81 million jobs in 2020. In nearly all economies with available quarterly data for 2020, employment levels contracted compared to 2019. The impact of the crisis has been far-reaching, with underemployment surging as millions of workers are asked to work reduced hours or no hours at all. Overall, working hours in Asia and the Pacific decreased by an estimated 15.2 per cent in the second quarter and by 10.7 per cent in the third quarter of 2020, relative to pre-crisis levels. Working-hour losses are also influenced by the millions of persons moving outside the labour force or into unemployment as job creation in the region collapsed. Using available quarterly data, the report provides a preliminary estimate that the regional unemployment rate could increase from 4.4 per cent in 2019 to somewhere between 5.2 per cent and 5.7 per cent in 2020. “COVID-19 has inflicted a hammer-blow on the region’s labour markets, one that few governments in the region stood ready to handle. Low levels of social security coverage and limited institutional capacity in many countries have made it difficult to help enterprises and workers back on their feet, a situation compounded when large numbers remain in the informal economy. These pre-crisis weaknesses have left far too many exposed to the pain of economic insecurity when the pandemic hit and inflicted its toll on working hours and jobs,” said Ms Chihoko Asada Miyakawa, ILO Assistant Director General and Regional Director for Asia and the Pacific.

Women and young people are disproportionately hit

According to the report, most countries in the region saw a larger decline in working hours and employment for women than men. Also, women were more likely to move into inactivity than men. Young people have also been especially affected by working-hour and job losses. The youth share in overall employment loss was 3 to 18 times higher than their share in total employment. “The report shows a clear picture of young people and women being pushed out of work compared to other workers,” says Ms Sara Elder, Senior Economist at the ILO Regional Office for Asia and the Pacific and lead author of the report. “With increased unemployment, young workers are likely to find it difficult to compete for new jobs. When they do find work, it may well be a job that does not match to their aspirations. Millions of women have also paid a high price and it could take years for those who have exited the labour force to return to full employment.”

Labour income as another crisis victim

With fewer paid hours of work, median incomes are falling. Overall, labour income is estimated to have fallen by as much as 10 per cent in the Asia–Pacific region in the first three quarters of 2020, equivalent to a 3 per cent loss in gross domestic product. A further consequence is the increase in working poverty levels. In absolute numbers, preliminary estimates in the report find an additional 22 million to 25 million persons could fall into working poverty, which would push the total number of working poor (living on less than $1.90 a day) in the Asia–Pacific region to between 94 and 98 million in 2020. The report also warns that given the scope of the damage to labour markets, the overall size of the fiscal response in the region has been insufficient, especially in the region’s developing economies. As a result of fiscal expenditure gaps, the crisis is likely to exacerbate inequalities among countries in the Asia and the Pacific. “On the more positive side,” says Ms Elder, “we are able to show in this report that government efforts to help enterprises retain workers, albeit on reduced hours, have worked to prevent what would otherwise be larger job losses. Given the mounting evidence that social protection and employment policies save jobs and incomes, the hope is that the crisis brings about a more permanent and increased investment in elements needed to boost resilience and promote a more people-centred future of work.”  

For further information and media enquiry, please contact AsiaPacific@ilo.org 

***

 

MoNHS,R&C and UNICEF

PRESS RELEASE

Strict Adherence to SoPs Imperative for Countering Second Wave of COVID-19

Government of Pakistan and UNICEF Urge People to Continue Taking Precautions ISLAMABAD, 16 December 2020 – The Ministry of National Health Services, Regulations and Coordination (MoNHSRC), provincial health departments and United Nations Children’s Fund (UNICEF) urged the public to strictly adhere to COVID-19 Standard Operating Procedures (SoPs) in the wake of increasing number of infections in the country during the second wave of COVID-19.

While chairing an online event about Reinforcing Standard Operating Procedures (SOPs) during Second Wave of COVID-19, organized jointly by MoNHSRC and UNICEF, Dr. Faisal Sultan said, “The second wave of COVID-19 is rapidly spreading and the virus is reaching areas in the country where the virus did not reach during the first wave. The number of positive cases is increasing at a rapid pace and we have had to increase the capacity of treating COVID-19 cases in our hospitals.”

“COVID-19 is deadly virus but we can control it just as we controlled it by following the SoPs during the first wave. The Government of Pakistan is seeking your full cooperation in adhering to the SoPs. We can save precious lives including those of our near and dear ones by taking preventive measures. Wear a mask, maintain social distance, wash hands with soap frequently and avoid crowded places. Do celebrate on Christmas and wedding events but please keep the gatherings limited and take all precautions by following the SoPs. We are a strong nation and can defeat COVID-19 but for that cooperation from the provincial government is imperative, he added.”

Referring to the incident of the Army Public School on this day in 2014, the SAPM said, “We shall always remember our martyrs from the tragic event of APS in Peshawar and they shall always be alive in our hearts”.

With over 440,000 confirmed cases in the country till date, the Government of Pakistan is once again taking strict measures to mitigate the spread of coronavirus infection in the country. Provincial governments are following suit with health departments and administrative services enforcing necessary preventing measures at public places and encouraging people to protect themselves and others from the virus by adhering to the SoPs. 

“With increase in number of coronavirus infections, the number of patients in the hospitals has also increased, said Dr. Yasmin Rashid, Health Minister Punjab. “This has happened because we did not continue to practice SoPs. We must wear a mask when going out as it reduces transmission of infection by 70 per cent. Proper handwashing with soap is very beneficial and so is social distancing. If we continue to practice all SoPs, I assure you that we will counter the second wave of COVID-19 just as successfully as we managed the first time.”

In his message for the occassion, Mr. Taimur Saleem Jhagra, Minister for Finance and Health, Khyber Pakhtunkhwa said, “It is after 102 years that a pandemic such as COVID-19 has hit the world. Pakistan countered the first wave very well but now the second wave has hit the country and it can be even more dangerous. I request people to alter their social behaviour in terms of following the SoPs strictly so that neither our health system is overburdened, nor is the economic development affected. We must also follow the instructions of the NCOC for avoiding mass gatherings. And within our families, we must adhere to the SoPs and take special care of the elderly and those showing symptoms.”

“Despite all difficulties, the first wave of COVID-19 was tackled by Pakistan in a very efficient manner, “said Ms. Rubaba Khan Buledi, Parliamentary Secretary Health, Balochistan. “Responsible civic behaviour of the general public made it possible. Now that the second wave of COVID-19 has hit Pakistan and we need the people to follow the SoPs very diligently. Please ensure that you wash your hands frequently, wear the mask properly when going out, do not go out unnecessarily and maintaining social distance with others. We in Balochistan are taking all possible measures to curb and curtail this disease.”

Dr. Irshad Memon, Director General Health Services Sindh said, “In Sindh, we managed to control the situation well during the first wave of COVID-19, however, just as the number of cases started to decrease, we became complacent in taking precautions against the virus. The positivity rate that had come down to around 2.5 percent has now gone up to 14 percent in the province, but we can control this by practicing the SoPs”

Since the outbreak of COVID-19 in Pakistan, UNICEF has been on the forefront supporting the Government of Pakistan to help prevent the spread of the virus. It has supported the national response in Risk Communication and Community Engagement by ensuring timely and accurate information to families and communities and promoting positive behavior towards following of SoPs.

“As we are now receiving positive news about COVID-19 vaccines, we must realise that the existence of a safe and effective vaccine alone will not end the pandemic,” said UNICEF Representative in Pakistan, Ms. Aida Girma. “We need a diverse set of tools to help slow the spread of COVID-19, including continuation of preventive measures such as hand washing, physical distancing and mask wearing, diagnostics and treatments. We can’t be complacent; we can’t let our guards down and we must continue to adhere to SOPs.”

“UNICEF has joined the Advance Market Commitment of the COVAX Facility to allow low- and lower-middle income countries access to COVID-19 vaccines. In Pakistan, UNICEF will be leveraging its unique strengths in community engagement and vaccine supply to make sure that COVAX facility have safe, fast and equitable access to the vaccine. This is an enormous undertaking and many challenges still lay ahead, but we are determined to make sure that Pakistan receives sufficient number and citizens have access to it”.

During the online event, a COVID-19 survivour shared her experience of suffering and recovering from the infection and the importance of practicing SoPs, young adolescents talked about safe behaviour inside and outside their homes and a video was aired encouraging people to:

· Avoid public gatherings

· Wear a mask when they leave their house, including when shopping at the market and if praying at the mosque

· Wash their hands with soap for 20 seconds, or with a sanitizer, regularly

· Refrain from touching their eyes, nose, mouth and ears with unwashed hands

· Stay at least six feet away from other people

· Stay at home in case they develop COVID-19 symptoms.

######

For further information, please contact:

Sajid Shah, MoNHSRC, Sajidshahpro@gmail.com, Tel: +92 301 5103069

Sami Malik, UNICEF Pakistan, asmalik@unicef.org, Tel: +92 300 855 6654 Arsalan Khalid, UNICEF Pakistan, arsalanksr@hotmail.com, Tel: +92 333 525 1175

***

 

کووِڈ- 19 کی دوسری لہر کا مقابلہ کرنے کے لئے ایس او پیز پر سختی سے عمل کرنے کی

ضرورت ہے

 حکومتِ پاکستان اور یونیسف کا زور کہ لوگ حفاظتی اقدامات پر سختی سے عمل جاری رکھیں

 

اسلام آباد، 16 دسمبر 2020 – وزارتِ صحت حکومت پاکستان، صوبائی محکمہ جاتِ صحت اور اقوام متحدہ کے بچوں کے فنڈ (یونیسف) نے عوام پر زور دیا ہے کہ وہ کووِڈ- 19 کی دوسری لہر کا مقابلہ کرنے کے لئے ایس او پیز پر سختی سے عمل کریں کیونکہ دوسری لہر کے دوران ملک بھر میں کورونا سے متاثر ہونے والے لوگوں کی تعداد میں خطرناک حد تک اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔

وزارتِ صحت حکومتِ پاکستان اور یونیسف کے منعقد کردہ مشترکہ آن لائن سیمنار کی صدارت کرتے ہوئے وزیرِ اعظم کے مشیرِ خصوصی ڈاکٹر فیصل سلطان نے اس موقع پر کہا: کورونا کی دوسری لہر تیزی سے پھیل رہی ہے یہاں تک کہ ان علاقوں تک پہنچ چکی ہے جو پہلی لہر کے دوران وائرس سے بچ گئے تھے۔ مثبت کیسز کا تناسب بہت تیزی سے بڑھ رہا ہے۔ ہسپتال پر بوجھ بھی بڑھ رہا ہے ۔ کورونا وبا مہلک ہے لیکن اس پر قابو پایا جا سکتا ہے۔ ایس او پیز پر عمل کرنے کی وجہ سے ہم نے پہلی لہرکوقابوکرلیا تھا۔ وبا کے خلاف ہمارا بروقت ردعمل اور احتیاطی تدابیر پرعمل کرنا دنیا کے لئے ایک مثال بنی تھی۔

انہوں نے مزید کہا: حکومت کو ایک بار پھر آپ سے تعاون درکار ہے۔ سب سے گزارش ہے کہ احتیاطی تدابیر پر عمل کریں۔  صرف چند احتیاطی تدابیر اختیار کرکے آپ اپنے پیاروں اور ہم وطنوں کی زندگیوں کو بچا سکتے ہیں۔ ماسک پہنیں،دوسروں  6 فٹ کا فاصلے رکھیں، ہاتھ دھوتے رہیں، اور بڑے اجتماعات سے اجتناب کریں۔ کرسمس اور شادی تقریبات کے دوران احتیاط لازمی کریں۔ آئیے اس بات کو یقینی بنائیں کہ ہماری خوشیاں کسی کے لیے پریشانی یا دکھ کا باعث نہ بنیں۔ کورونا کا مقابلہ کرنے کے لیے ایک اہم بات یہ ہے کہ ہم اس بات کو یاد رکھیں کہ یہ وبا ابھی ختم نہیں ہوئی۔ آج کے دن اے پی ایس کے شہدا کو ہم اپنی دعاوں میں یاد رکھیں اور وہ ہمیشہ ہمارے دلوں میں زندہ رہیں گے۔

اس وقت تک ملک بھر میں کورونا کے 440,000  سے زیادہ مصدقہ کیسز منظر عام پر آچکے ہیں اور حکومتِ پاکستان ایک مرتبہ پھر وائرس کے پھیلاؤ میں کمی لانے کے لئے سخت اقدامات اٹھا رہی ہے۔ صحت کے صوبائی محکمہ جات اور انتظامیہ عوامی مقامات پر تمام ضروری اقدامات اٹھاتے ہوئے لوگوں کی حوصلہ افزائی کررہی ہے کہ وہ ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد یقینی بنائیں تاکہ وائرس سے بچا جاسکے۔

اس موقع پر بات کرتے ہوئے صوبہ پنجاب میں وزیر برائے صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا کہ ـ’’ کورونا وائرس کے متاثرین میں اضافہ کی وجہ سے ہسپتالوں میں مریضوں کی تعداد میں کئی گنا اضافہ ہوچکا ہے‘‘۔

انہوں نے مزید کہا:

’’ مریضوں کی تعداد میں اضافے کی وجہ یہ ہے کہ ہم نے ایس او پیز پر عمل جاری نہیں رکھا۔ ہمیں چاہیے گھر سے باہر نکلتے وقت ماسک کا استعمال کریں تاکہ وائرس کے پھیلاؤ کو 70 فی صد تک کم کیا جاسکے۔ صابن سے باقاعدہ سے ہاتھ دھونا اور سماجی دُوری قائم رکھنا بھی وائرس سے بچنے کے لئے بے حد فائدہ مند ہے۔ اگر ہم تمام ایس او پیز پر عمل جاری رکھیں، میں آپ کو یقین دلاتی ہوں کہ ہم کووِڈ- 19 کی دوسری لہر کا بھی اسی طرح کامیابی سے مقابلہ کرسکتے ہیں جیسے ہم نے پہلی مرتبہ اس کی پہلی لہر کا کیا تھا‘‘۔

اس موقع پر اپنا پیغام  میں  وزیر صحت و مالیات خیبر پختونخواہ جناب تیمور سلیم جھگڑا نے کہا کہ دنیا کو تقریباً سو برس بعد کووِڈ- 19 جیسی عالمی وبا کا سامنا ہے۔ پاکستان نے کووِڈ- 19 کی پہلی لہر کا اچھی طرح مقابلہ کیا مگر اب ہمیں اس کی دوسری لہر کا سامنا ہے جو کہ پہلی لہر سے زیادہ خطرناک ثابت ہوسکتی ہے۔ میں آپ سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ اپنے سماجی رویوں میں ضروری تبدیلیاں لاکر ایس او پیز پر سختی سے عمل کریں تاکہ ہمارے صحت کے نظام پر زیادہ بوجھ نہ پڑے اور نہ ہی معاشی ترقی کا عمل متاثر ہو۔ ہمیں چاہیے کہ ہم نیشنل کمانڈ آپریشن سنٹر کی ہدایات پر سختی سے عمل کریں اور عوامی اجتماعات سے پرہیز کریں۔ ہم اپنے خاندان کے ساتھ رہتے ہوئے گھر پر بھی ایس او پیز پر سختی سے عمل کریں اور بزرگ افراد کے ساتھ ساتھ ان لوگوں کا بھی خاص خیال کریں جن میں بیماری کی علامات ظاہر ہوچکی ہوں‘‘۔

پارلیمانی سیکرٹری صحت بلوچستان محترمہ رباب خان بلیدی نے اس موقع پر  کہا کہ مشکلات کے باوجود پاکستان نے کووِڈ- 19 کی پہلی لہر کا بے حد موثر انداز میں مقابلہ کیا اور اس کی بنیادی وجہ عوام کا ذمہ دارانہ رویہ تھا۔ اب جبکہ پاکستان کووِڈ- 19 کی دوسری لہر کی لپیٹ میں آچکا ہے لوگوں کا ایس او پیز پر مستقبل مزاجی اور سختی سے عمل کرنا نہایت ضروری ہے۔ براہ مہربانی باقاعدگی سے ہاتھ دھونا یقینی بنائیں، گھر سے باہر جاتے ہوئے ماسک ضرور پہنیں، اگر ضروری نہ ہو تو گھر سے باہر ہرگز نہ جائیں اور سماجی دُوری کے اصول پر سختی سے عمل کریں۔ ہم بلوچستان میں اس بیماری کی روک تھام اور اس کا پھیلاؤ روکنے کے لئے ہر ممکنہ کوشش کررہے ہیں۔

صوبہ سندھ کے ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ سروسز ڈاکٹر ارشاد میمن نے اس موقع پر بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم  صوبہ سندھ میں کووِڈ- 19 کی پہلی لہر کے دوران حالات پر قابو پانے میں بہت حد تک کامیاب رہے۔ تاہم جب کیسز کی تعداد میں بہت حد تک کمی آگئی تو ہم نے غیر ذمہ دارانہ رویہ اپنایا اور وائرس سے بچاؤ کے لئے ضروری حفاظتی اقدامات پر عمل کرنا ترک کردیا۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ جو کیسز میں 2.5 فی صد تک کم ہوگئے تھے ان کی تعداد بڑھتے ہوئے اب صوبہ بھر میں 14 فی صد ہوچکی ہے۔ اگر ہم ایس او پیز پر سختی سے عمل یقینی بنائیں تو ہم اب بھی اس صورت حال پر قابو پاسکتے ہیں۔

پاکستان میں کووِڈ- 19 کی وبا پھیلنے سے لے کر اب تک یونیسف حکومت پاکستان کے ساتھ مل کر وائرس کے پھیلاؤ کا عمل روکنے میں کلیدی کردار ادا کرتا رہا ہے۔ اس ادارے نے خطرات سے آگاہی اور روک تھام کے عمل میں لوگوں کی شمولیت کو یقینی بنانے کے لئے نہایت اہم کردار ادا کیا ہے۔ ادارہ بروقت درست معلومات فراہم کرتا رہا ہے تاکہ  لوگ ایس او پیز پر عمل کریں۔

پاکستان میں یونیسف کی نمائندہ محترمہ عائدہ گِرما نے کہا کہ ہم اس وقت یہ مثبت خبریں سن رہے ہیں کہ کووِڈ- 19 کی ویکسین تیار ہوچکی ہے لیکن ہمیں یہ بات ذہن میں رکھنی چاہیے کہ صرف ویکسین اس عالمی وبا پر قابو پانے کے لئے ہرگز کافی نہیں ہے۔ ہمیں اس پر مکمل طور پر قابو پانے کے لئے مختلف طریقہ ہائے کار پر عمل کرنا ہوگا تاکہ ہم وائرس کے پھیلاؤ کے عمل میں خاطر خواہ کمی لاسکیں۔ ہمیں حفاظتی اقدامات پر عمل جاری رکھنا ہوگا جن میں باقاعدگی سے ہاتھ دھونا، سماجی دُوری کا اصول اپنانا ،  ماسک پہننا، تشخیص اور علاج کرانا شامل ہیں۔ ہم غفلت کا رویہ نہیں اپنا سکتے، ہم اپنے تحفظ سے دستبردار نہیں ہوسکتے اس لئے ضروری ہے کہ ہم ایس او پیز پر سختی سے عمل جاری رکھیں۔

انہوں نے مزید کہا:

’’ یونیسف درمیانے اور کم آمدنی کے ممالک کو کووِڈ- 19 کی ویکسین (کو ویکس) فراہم کرنے کے لئے ایڈوانس مارکیٹ کمٹمنٹ کا حصہ بن چکا ہے۔ پاکستان میں یونیسف اپنی مثالی صلاحیت سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ویکسین کے تک تیز اور محفوظ رسائی کے عمل کو یقینی بنائے گا۔ یہ ایک بہت بڑا اقدام ہے جس کی راہ میں اب بھی کچھ مشکلات حائل ہیں مگر ہم اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ پاکستان کو مناسب مقدار میں ویکسین فراہم کی جائے اور یہ لوگوں کی اس تک رسائی ہو‘‘۔

اس موقع پر کووِڈ- 19 سے صحت یاب ہونے والے لوگوں نے بیماری میں مبتلا ہونے اور تندرست ہونے کے تجربات سے آگاہ کیا۔ انہوں نے   بیماری سے بچنے کے لئے ایس او پیز پر سختی سے عمل کرنے کی تاکید کی۔ اس موقع پر نوجوانوں اور نو بالغوں نے گھر کے اندر اور گھر سے باہر محفوظ رویوں پر عمل کرنے کے بارے میں بات کی اور ایک ویڈیو کے ذریعے لوگوں کو درج ذیل رویے اپنانے کا پیغام بھی دیا :

· عوامی اجتماعات سے دُور رہیں

· گھر سے باہر نکلتے ہوئے، یہاں تک کہ خریداری اور مسجد میں جاتے وقت ماسک پہنیں۔

· 20 سیکنڈز تک ہاتھ دھوئیں یا پھر سینیٹائزر کی مدد سے ہاتھوں کو باقاعدگی سے صاف کریں۔

· دھوئے بغیر اپنے ہاتھوں سے آنکھیں، ناک اور کان چھونے سے اجتناب کریں۔

· دوسرے لوگوں سے کم از کم چھ فٹ کا فاصلہ رکھیں۔

· کووِڈ- 19 کی علامات ظاہر ہونے کی صورت میں گھر پر رہیں۔

######

مزید معلومات کے لئے رابطہ کریں:

ساجد شاہ، وزارتِ صحت

ای میل: Sajidshahpro@gmail.com

فون: +92 301 5103069

سمیع ملک، یونیسف پاکستان

ای میل: asmalik@unicef.org

فون: +92 300 855 6654

ارسلان خالد، یونیسف پاکستان

ای میل: arsalanksr@hotmail.com

فون: +92 333 525 1175

***

UNODC

PRESS RELEASE

Fourth steering committee meeting convened to advance Rule of Law roadmap in Balochistan

16 December 2020, Quetta – The Steering Committee on the Rule of Law (RoL) Roadmap Balochistan convened its fourth stock take meeting on 16 December 2020 in Quetta. The session concluded with a firm commitment made by Mr. Ziaullah Langove, Minister Home & Tribal Affairs, GoB towards advancing the criminal justice sector reforms envisioned under the Rule of Law roadmap in Balochistan.

Balochistan has achieved significant milestones under the RoL Roadmap Project since its inception to date. This project is being implemented by UNODC and supported by the British High Commission. Balochistan has succeeded to establish a fully functional governance mechanism that drives evidence-based and cross institutional RoL Reform which was possible due to the commitment and dedication of the government of Balochistan and all stakeholders to make this reform meaningful and sustainable.

The progress made under the roadmap was applauded by all the stakeholders despite the unprecedented challenges of COVID-19. The participants took stock of the achievements, lessons and exchanged views on next prospects for cooperation. Mr. Hafiz Abdul Basit, Additional Chief Secretary, Home & Tribal Affairs, GoB appraised the SC members of another major milestone, which is the final approval of the PC-1 by the Government, committing the amount PKR 500 million for the RoL reform in the province under the Roadmap.  He further thanked all those who have been working relentlessly to get this approval. 

Speaking on the occasion, Mr. Jeremy Milsom, Representative, UNODC Pakistan emphasized that through the coordination efforts with the Government of Balochistan, considerable progress under the Rule of Law reforms has been achieved. However, the time is now to continue pushing forward and move the needle on implementing a robust set of reforms to align the criminal justice institutions to reinforce human rights and address underlying challenges of gender-based violence through promoting the rule of law and democracy in Balochistan.

Key findings from the assessment survey on citizens’ perception regarding the performance of criminal justice institutions and the baseline study in Balochistan were presented. While the findings of the survey and baseline provide a benchmark to use a demand-driven approach through citizens’ perspectives to enhance legitimacy, fairness, efficiency and transparency of the criminal justice sector towards ensuring safety and security of the citizens, the baseline also provides a yardstick for criminal justice institutions to measure their performance and progress against RoL provincial set targets.

The Delivery Unit apprised the forum further on the progress made to date, particularly on the digital platforms through a demonstration of the website which is continuously being updated to project the dynamic nature of the criminal justice reforms led by the RoL roadmap. The digital interface of the roadmap is powered by a dashboard that provides a convergence platform through evidence-led data analytics to inform both policy and practice of  criminal justice institutions.

The Roadmap project is recognized as a groundbreaking and innovative approach to drive evidence-based policy and reform through a robust governance structure and regular stock takes.

The organizers of the steering committee meeting thanked all stakeholders for their participation and acknowledged UNODC’s efforts and the British High Commission for their continued and generous support.

For further information, please contact:-

Ms. Rizwana Rahool, Communications Officer, UNODC Pakistan, cell: 0301 8564255, email: rizwana.asad@un.org

***

 

پریس ریلیز

 

'بلوچستان قانون کی حکمرانی روڈمیپ'

پر پیشرفت کے جائزہ کے لئے سٹیرنگ کمیٹی کا چوتھا اجلاس

 

کوئٹہ: (16 دسمبر 2020)

'بلوچستان قانون کی حکمرانی روڈمیپ'  کی سٹیرنگ کمیٹی کا چوتھا جائزہ اجلاس 16 دسمبر 2020 کو کوئٹہ میں منعقد ہوا۔ بلوچستان کے وزیر داخلہ و قبائلی امور جناب ضیاء اللہ لنگوو نے اس روڈمیپ کے تحت فوجداری نظام انصاف کے لئے وضع کی گئی اصلاحات کو آگے بڑھانے کے پختہ عزم کا اظہار کیا۔

'قانون کی حکمرانی روڈمیپ' پراجیکٹ کے تحت بلوچستان نے نمایاں پیشرفت دکھائی ہے۔ یو این او ڈی سی اس  پراجیکٹ پر برٹش ہائی کمیشن کی معاونت سے عملدرآمد کر رہا ہے۔ صوبے نے طرزحکمرانی کا ایک مضبوط اور فعال نظام تشکیل دینے میں کامیابی حاصل کر لی ہے جس کے تحت اس میدان میں مختلف اداروں کی شمولیت سے، شواہد پر مبنی اصلاحات کے عمل کو آگے بڑھایا جا رہا ہے۔ حکومت بلوچستان اور تمام متعلقہ فریقوں کے پختہ عزم اور لگن کی بدولت ان اصلاحات کو بامعنی اور پائیدار شکل ملی ہے۔

کووڈ -19 کے باعث شدید مشکلات کے باوجود روڈمیپ پر پیشرفت کا عمل جاری رہا جسے تمام متعلقہ فریقوں نے سراہا ہے۔ شرکاء نے اس سلسلے میں حاصل کی گئی کامیابیوں اور سبق آموز تجربات کا جائزہ لیا اور تعاون کے آئندہ امکانات پر تبادلہ خیالات کیا۔ بلوچستان کے داخلہ و قبائلی امور کے آڈیشنل چیف سیکرٹری جناب حافظ عبدالباسط نے سٹیرنگ کمیٹی کے ارکان کو ایک اور اہم  سنگِ میل کے بارے میں آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ حکومت نے پی سی ون کی حتمی منظوری دے دی ہے اور روڈمیپ کے تحت صوبے میں قانون کی حکمرانی اصلاحات کے لئے 500 ملین روپے کی رقم رکھی گئی ہے۔ انہوں نے اس منظوری کے سلسلے میں انتھک کام کرنے والے تمام لوگوں کا شکریہ ادا کیا۔

اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے یو این او ڈی سی پاکستان کے ریپریزنٹیٹو جناب جیریمی مِلسم نے کہا کہ حکومت بلوچستان کی مربوط کوششوں کی بدولت قانون کی حکمرانی اصلاحات پر پیشرفت خاطرخواہ رہی ہے۔ تاہم وقت کا تقاضا ہے کہ ان کو آگے بڑھانے کا سلسلہ جاری رکھا جائے اور ایسی مضبوط اصلاحات  کو عملی جامہ پہنانے پر زور دیا جائے جو فوجداری انصاف کے اداروں کو انسانی حقوق کے تقاضوں سے پوری طرح ہم آہنگ بنائیں اور صنفی تشدد جیسی مشکلات کو دور کرنے کے لئے صوبے میں قانون کی حکمرانی اور  جمہوریت کو فروغ دیں۔

اس موقع پر شرکاء کو صوبے میں فوجداری انصاف کے اداروں کی کارکردگی کے بارے میں شہریوں کے خیالات کے تجزیہ سروے اور بیس لائن سٹڈی سے حاصل ہونے والی اہم معلومات سے بھی آگاہ کیا گیا۔ یہ معلومات ایک بنیادی معیار کا کام دیتی ہیں جنہیں استعمال کرتے ہوئے شہریوں کے خیالات اور صورتحال کے تقاضوں کے مطابق ایک لائحہ عمل اپنایا جا سکتا ہے جس سے شہریوں کا تحفظ اور سلامتی یقینی بنانے میں ایک طرف فوجداری نظام انصاف کی جائز و منصفانہ حیثیت، کارکردگی اور شفافیت میں بہتری آئے گی جبکہ دوسری جانب بیس لائن سٹڈی ان اداروں کی کارکردگی اور قانون کی حکمرانی کے سلسلے میں صوبے کے طے شدہ اہداف پر ہونے والی پیشرفت کا اندازہ لگانے کے لئے ایک پیمانے کا کام بھی دیتی ہے۔

ڈلیوری یونٹ نے اجلاس کو بالخصوص ڈیجیٹل پلیٹ فارمز کے شعبے میں ہونے والی پیشرفت سے آگاہ کیا۔ اس سلسلے میں ویب سائٹ کے ڈیمو کے ساتھ بتایا گیا کہ ویب سائٹ کو مسلسل بنیاد پر اپ ڈیٹ کیا جا رہا ہے تاکہ 'قانون کی حکمرانی روڈمیپ' کے تحت فوجداری نظام انصاف کی اصلاحات کو بھرپور انداز میں اجاگر کیا جا سکے۔ روڈمیپ کے بارے میں ڈیجیٹل طریقے سے معلومات مہیا کرنے کے لئے ایک ڈیش بورڈ ترتیب دیا گیا ہے جہاں شواہد پر مبنی  تجزیاتی معلومات کو یکجا کیا گیا ہے اور فوجداری نظام انصاف کے اداروں کو پالیسی اور عملی دونوں طرح کی معلومات بآسانی مل سکتی ہیں۔

یہ روڈمیپ پراجیکٹ اپنی نوعیت کا پہلا اور جدت آمیز طریقہ ہے جو گورننس کے مضبوط ڈھانچے اور باقاعدہ جائزوں کی شکل میں شواہد پر مبنی پالیسی  اور اصلاحات کے عمل کو آگے بڑھانے میں مدد دیتا ہے۔

سٹیرنگ کمیٹی کے منتظمین نے اجلاس میں شرکت پر تمام متعلقہ فریقوں کا شکریہ ادا کیا اور پراجیکٹ کے سلسلے میں یو این او ڈی سی کی کوششوں اور برٹش ہائی کمیشن کی مسلسل اور بھرپور معاونت پر انہیں خراج تحسین پیش کیا۔

مزید معلومات کے لئے رابطہ: - 

محترمہ رضوانہ راہول، کمیونیکیشن آفیسر، یو این او ڈی سی پاکستان، موبائل:0301 8564255، ای میل:rizwana.asad@un.org

16 دسمبر 2020

کوئٹہ

 

Media Contacts
UN entities involved in this initiative
ILO
International Labor Organization
UNICEF
United Nations Children’s Fund
UNODC
United Nations Office on Drugs and Crime